کھانا کھانے کے بعد دونوں دوست پرانی یادوں کو تازہ کرنے لگے اور

اسلم اور علی بچپن کے بہت ہی اچھے دوست تھے , اسلم روز گار کے لئے بیرون ملک چلا گیا اور کافی عرصے کے بعد واپس آیا ۔ پھر ایک دن اسلم نے اپنے دوست علی سے ملنے کا سوچا اور اس کے گھر چلا گیا ۔ دونوں ایک دوسرے کو دیکھ کر بہت خوش ہوۓ پھر علی نے اپنی بیوی سے کہا کہ میرا بچپن کا دوست بہت عرصے کے بعد آیا ہے اس کے لیے اچھے اچھے کھانے بنا کر لاؤ ۔

کھانا کھانے کے بعد دونوں دوست پرانی یادوں کو تازہ کرنے لگے اور کچھ دیر رکنے کے بعد اسلم وہاں سے رخصت ہو گیا ۔ ابھی تھوڑی دیر گزری تھی کہ علی کی بیوی کا سونے کا لاکٹ گم ہو گیا اور اس نے کہا کہ تمہار ادوست ہی آیا تھا اورچور بھی وہی ہے ، کیونکہ وہ رات کافی دیر ہمارے گھر میں ٹھہرا تھا ۔ پہلے تو شوہر نامانالیکن بیوی کے زیادہ اصرار کرنے پر اس نے اپنے دوست کو فون کیا اور لاکٹ کے بارے میں پوچھا ۔ اس پر اسلم نے کہا کہ مجھے پیسوں کی ضرورت تھی اس لیے میں آپ کو بغیر بتاۓ وہاں سے لاکٹ لے کر لے آ گیا ہوں ۔ کچھ دن کے بعد وہ علی کے گھر آیا اور لاکٹ کی رقم واپس کر کے چلا گیا ۔ پھر مزید کچھ دن گزرنے کے بعد اس کی بیوی کو اپنے گھر کی صفائی کرتے ہوۓ وہ لاکٹ مل گیا ۔ اس نے جلدی سے اپنے شوہر کو بلایا اور کہنے لگی کہ یہ لاکٹ تو ہمیں اپنے ہی گھر سے مل گیا ہے ، وہ دونوں پر یشان ہو گئے کہ لاکٹ توہمارے گھر پر ہی تھا لیکن اسلم نے پیسے کیوں دیے ۔

علی نے فورا اسلم کو فون کیا اور کہا کہ لاکٹ تو ہمارے ہی گھر میں کھو گیا تھا لیکن تم نے ہمیں لاکٹ کے پیسے کیوں دیۓ ۔ اسلم کہنے لگا اب تو تمہیں لاکٹ مل گیا ہے اگر نہ ملتا تو سو فیصد شک مجھ پر پڑنا تھا کیونکہ اس رات میں ہی آپ کے گھر آیا تھا ۔ ایک طرف میرے بچپن کا دوست تھا اور دوسری طرف قیمتی لاکٹ ۔ میں نے پیسے دے کر اپنی دوستی میں شک اور دراڑ نہیں آنے دی ۔ اس لئے میں نہیں چاہتا تھا کہ میرا دوست شک میں رہے کہ میں نے اس کے گھر سے لاکٹ چرایا تھا ۔ اس لیے میں نے پیسے دے کر دوستی بھالی ۔ تو دوستو ہمیں کسی پر کلک کرنےسے پہلے ایک بار کنفرم کر لینا چاہیے کہ کیا ہم جن کے بارے میں ایسا سوچ رہے ہیں کیا واقعی اس میں کوئی سچائی بھی ہے یا نہیں

Categories

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *