کامیابی کا راز

ایک ڈاکٹر صاحب نے مطب شروع کیا اور تھوڑے ہی دنوِں میں کامیاب ہوگیا۔ انھوں نے یہ خصوصت دکھائی کہ وہ ہر آنے والے مریض کو سلام میں پہل کرتے۔ عام طور پر ڈاکٹر لوگ اس کے منتظر ہوتے ہیں کے کہ مریض ان کو سلام کریں ۔ یہاں پر ڈاکٹر نے خود مریض کو سلام کرنا شروع کردیا۔یہ طریقہ کامیاب رہا۔ اور جلد ہی ان کا مطب خوب چلنے لگا ۔

ایک دوکاندار نے دیکھا کہ گاہک کے پاس اگر کئی نوٹ ہیں تو عام طور پر وہ میلے اور پھٹے ہوئے نوٹ دوکاندار کو دیتا ہے، اور اچھے اور صاف نوٹوں کو بچا کر جیب میں رکھتا ہے۔اس سے دوکاندار نے سمجھا کہ گاہک صاف نوٹ پسند کرتا ہے،اس نے گاہک کی اس نفسیات کو استعمال کرنے کا فیصلہ کیا ۔اس نے یہ اصول بنایا کہ جب کوئی گاہک اس سے سامان خریدے گا اور قیمت ادا کرنے کے لئے بڑا نوٹ دے گا تو وہ حساب کرتے وقت گاہک کو نئے اور صاف نوٹ لوٹائے گا۔

دوکاندار کی یہ تدبیر بظاہر معمولی اور بے قیمت تھی ۔ مگر اس نے گاہکوں کو بہت متاثر کیا۔ وہ سمجھے کہ دوکاندار ان کا بہت خیال کرتا ہے۔ دھیرےدھیرے اس نے اس معمولی تدبیر سے گاہکوں کے دل جیت لئے۔ اس کی دوکان اتنی کامیاب ہوگئی کہ ہروقت اس کے ہاں بھیڑ لگی رہتی۔

کامیابی کا راز یہ ہے کہ آپ اپنےاندر کوئی امتیازی خصوصیت پیدا کریں ،آپ یہ ثابت کریں کہ آپ لوگوں کہ ہمدرد ہیں۔ یہ کام کسی معمولی تدبیر سے بھی کیاجاسکتا ہے۔ حتیٰ کے چند الفاظ بولنے یا پرانے نوٹ کے بدلے نئے نوٹ دینےسے بھی….

Categories

Comments are closed.