میرا تعلق ایک ماڈرن گھرانے سے تھا

میرا تعلق ایک ماڈرن گھرانے سے تھا ، جینز کی پینٹ پہناد راتوں کو پارٹیاں انجواۓ کرنا , آدھی آدھی رات گھر سے باہر رہنا , کلب میں جانا , کزنز لڑکوں کے ساتھ دوستی ہمارے گھر میں مذہبی کلچر کا دور دور تک رواج نہیں تھا ۔ پھر ایک دن میں کالج سے گھر واپس آ رہی تھی۔ کہ راستے میں گاڑی خراب ہو گئی ,

گھر پہنچنے کے لیے میں نے کرائے پر ایک ٹیکسی لی وہ ٹیکسی والا مذہبی تھا اس نے اپنی ٹیکسی میں ایک بیان لگا دیا جو پردے اور آخرت کے متعلق تھا ۔ جب میں نے وہ بیان سنا تو میرے دل میں اللہ کا خوف اتنا آیا یوں سمجھ لیجئے اللہ نے میرا دل بدل دیاد مجھ پر اپنی رحمت کر دی ۔ پھر میں پانچ وقت نماز پڑھنے لگی اور میں نے شرعی پردہ بھی شروع کر دیا ۔ جب میرے کزنز کو اس بات کا پتہ چلا تو میرے کزنز نے میرا مذاق اڑانا شروع کر دیا ۔ وہ ہنس ہنس کر کہتے کیا اپنے شوہر سے بھی پردہ کرو گی ؟ کیا اپنی شادی پر بھی پردہ کرو گی ؟ پھر ہنتے تھے۔ اور کہتے تھے ، ہم تو سوچ سوچ کر آپ کے گھر آتے ہیں آپ نے پردہ جو کر کے بیٹھ جانا ہوتا ہے ۔ انچا میں تو مذاق کر رہی تھی ، اپنوں سے کیا پردہ ، ابھی کوئی عمرہے تمہاری پردے کی ، نقاب پوش حسینہ ۔ جب قرآن پڑھتے ہیں تو شروع شروع میں لوگوں کو ایسے جوش چڑھتے ہیں ، پھر آہستہ آہستہ سارے پردے اتر جاتے ہیں ، ہم نے دیکھے ہیں کئی لوگ ، کئی پردہ بیبیاں ۔ کچھ وقت کے بعد تم بھی پردہ چھوڑ دو گی ، دیکھو وہ اس اس کی بیٹی بھی پہلے پردہ کرتی تھیں اب دیکھو ان کا حال ۔ میں روز روز کی ان باتوں سے تنگ آ گئی تھی ، ایک دن نانی کے گھر دعوت تھی اور سب رشتہ دار آۓ ہوۓ تھے ، باتوں ہی باتوں میں پھر میرے پردے پر باتیں ہونے لگیں۔ میںنے موقع غنیمت جانا اور جواب دیا آپ لوگ کیا سمجھتے ہیں ! آپ کے بننے سے آپ کی باتوں کی تلخیاں میٹھی ہو جاتی ہیں ، نہیں ، آپ سمجھتے ہیں کہ آپ کے بننے یا ناپسند کرنے سے شریعت کے ہے اصول بدل جائیں گے ، نہیں ، آپ سمجھتے ہیں کہ آپ کے ڈرانے سے میرے حوصلے پست ہو جائیں گے ، نہیں ، آپ کے مشوروں سے میں خود کو آپ کے مطابق ڈھال لوں گی ،

نہیں ، دنیا کی رنگینیاں آپ مجھے دکھائیں گے اور میں اللہ کا رنگ چھوڑ دوں گی ، نہیں ، نہیں ، اتنا کچا نہیں ہوتا اللہ کا رنگ ، جب اخلاص کے ساتھصرف اللہ کے لئے کوئی راہ چنی جاتی ہیں نہ تو استقامت دیتا ہے۔ وہی عمل باقی رہ جاتا ہے انہیں مسافروں کو منزل ملتی ہے ، پر جب راہیں لوگوں کی رضا کے مطابق چنی جاتی ہیں تو مسافر منزل تک نہیں پہنچتے بیچ راستے ہی پلٹ جاتے ہیں ۔ اللہ کا رنگ سب سے پیارا ہے ۔ پھر ایک کزن کہنے لگا تمہارا حجاب تمہارے لیے کی دروازے بند کر دے گا ، میں نے کہا جی ہاں ! ان دروازوں میں سے ایک دروازہ جہنم کا بھی ہو گا ۔ بات سن کر سب کے سر شرم سے جھک کئے ۔ اللہ تعالی عورتوں کو پردہ کرنے کی توفیق عطا کریں آمین

Categories

Comments are closed.