سینے کی جلن اور تیزابیت کا جڑ سے خاتمہ

جہاں پر جلن ہو چاہے سینے میں جلن ہو چاہے معدے میں جلن ہو چاہے پیشاب میں جلن ہو چاہے ہاتھوں میں جلن ہو چاہے پاؤں میں جلن ہو آج کل گرمیوں میں اس کا بہترین علاج لوکی کا رس پیو لوکی کا رس بہت مفید ہے جیسے گاجر کا رس نکالتے ہو ایسے اس کا رس نکالو اور اس میں سبز دھنیا سبز پودینہ رگڑ کر ایک چمچ ایک گلاس میں ڈالو اس کو مکس کرو جلن کا بہترین علاج اس کو سمجھ لو پیارے پیغمبر جناب محمد ﷺ کی سب سے پسندیدہ سبزی لوکی ہے کدو ہے اب جو نبی ﷺ کی پسندیدہ ہے تو شیطان کی جہاں جلن ہے وہاں آگ ہے اور آگ سے کون بنا ہے شیطان بنا ہے۔ لوکی کا رس اس کو استعمال کرو جہاں جلن کا لفظ آئے چاہے جلن ہاتھوں میں ہو پاؤں میں ہو سینے میں ہو معدے میں ہو جلد پر ہو لوکی کا رس صبح دوپہر شام ایک ایک گلاس پیو۔

سینے میں جلن سے گلے میں تکلیف اور آواز بھرا یا بیٹھ جاتی ہے جبکہ منہ کا ذائقہ خراب محسوس ہوتا ہے۔سینے کی جلن میں سب سے عام شکایت شکم کے اوپری حصے اور سینے میں تکلیف ہوتی ہے اور کئی بار لگتا ہے جیسے ہارٹ اٹیک نے نشانہ بنالیا ہے۔اگر آپ کو اکثر سینے میں جلن کا سامنا ہوتا ہے تو بغیر ادویات کے بھی اس سے نجات پاسکتے ہیں، جس کے لیے چند غذاﺅں سے مدد لی جاسکتی ہے۔چکن:چکن کے گوشت کا وہ حصہ جہاں چربی نہ ہونے کے برابر اور پروٹین کی مقدار زیادہ ہوتی ہے یعنی چکن بریسٹ کا استعمال اس مسئلے سے نجات میں مددگار ثابت ہوسکتا ہے کیونکہ ان کو ہضم کرنا آسان ہوتا ہے۔پانی:اگر سینے میں جلن کی شکایت اکثر رہتی ہے تو یہ آپ کے لیے بہترین مشروب ثابت ہوسکتا ہے، میٹھے مشروبات اور جوسز وغیرہ سے یہ مسئلہ بڑھ سکتا ہے

کیونکہ کاربونیٹڈ مشروبات سے معدے میں گیس بڑھتی ہے اور ڈکاریں آتی ہیں، جو اس جلن کو بدتر بناتی ہیں۔ادرک:ادرک بدہضمی پر قابو پانے میں مدد دیتی ہے، ادرک کی چائے کا استعمال کرنا سینے میں جلن کی شکایت کو بھی کم کرسکتی ہے بس کیفین کے استعمال سے گریز کریں، یا ادرک کی کچھ مقدار کو چبالیں۔تربوز:اس پھل میں تیزابیت بہت کم ہوتی ہے اور سینے میں جلن کی علامات کو متحرک نہیں کرتا، خربوزے بھی اس حوالے سے اچھا انتخاب ثابت ہوسکتے ہیں۔براﺅن چاول:اس چاول میں پیچیدہ کاربوہائیڈریٹس ہوتے ہیں جو سادہ کاربوہائیڈریٹس جیسے سفید چاول، میٹھے مشروبات اور پیسٹریوں وغیرہ کے مقابلے میں ہضم ہونے میں زیادہ وقت لیتے ہیں اور یہ سینے میں جلن کی روک تھام کے لیے بہتر ہوتا ہے۔ اس میں فائبر کی مقدار بھی زیادہ ہوتی ہے۔اللہ ہم سب کا حامی و ناصر ہو۔آمین

Categories

Comments are closed.