حضور ﷺ کی عمر مبارک جب سات برس کی ہوئی تو آپ ﷺ کی آنکھیں دکھنے لگیں

حضور نبی اکرم ﷺ کی عمر مبارک جب سات برس کی ہوئی تو سر کا ر کی آنکھیں دکھنے لگیں آپ ﷺ کے دادا حضرت عبدالمطلب ؓ نے آپ کا بڑا علاج کر ا یا مگر سر کار کی آنکھیں ٹھیک نہیں ہو ئیں۔ حضر ت عبدالمطلب بڑے پریشان کہ اب کیا کیا جائے بڑا علاج کر ا یا ہے میرا پو تا ٹھیک نہیں ہو رہا آپ پریشان بیٹھے سوچ رہے تھے کہ کسی جاننے والے نے کہا کہ اے سردار مکہ پریشان نہ ہو مکہ شریف کے قریب عکا ظہ بازار ہے اس بازار کے ساتھ ایک طبیب کا گھر ہے بڑا قابل ہے وہ دوائی بھی دے گا اور آپ کے پو تے کو دم بھی کر ے گا یہ یقیناً ٹھیک ہو جا ئے گا ہم نے کئی بار اس کو آز ما یا ہے۔ حضرت عبدالمطلب بڑے خوش ہوئے آپ نے حضور اکرم ﷺ کو ساتھ لیا اس طبیب اس راہب کے پاس تشریف لے گئے شام کا وقت تھا۔

آ پ اس کے مکان پر پہنچے دروازہ بند تھا آپ نے وہاں کے لوگوں سے اس طبیب راہب کے بارے میں پوچھا کہ وہ کیسا ہے لوگوں نے بڑی تعریف کی کہ راہب صاحب کے ہاتھ میں بڑی شفاء ہے جو مریض بھی آ ئے یہ دوا بھی دیتے ہیں دم بھی کرتے ہیں اللہ تعالیٰ کر م کر تا ہے بیمار ہے ٹھیک ہو جا تا ہے۔ فر ما یا اب ہے کہاں لوگوں نے کہا حضور ہے تو گھر پر اب دروازہ نہیں کھلے گا فر ما یا کیوں لوگوں نے کہا سر کار یہ موجی بند ہے دوازہ بند کر کے عبادت کر تا رہتا ہے کئی کئی دن تک دروازہ بند رہتا ہے لوگوں نے کہا اب تو یہ کھلنا مشکل ہے کیونکہ آج ہی دروازہ بند ہوا ہے اب چھے مہینے سال کے بعد ہی کھلے گا حضرت عبدالمطلب بڑے پریشان ہوئے کہ اب کیا ہوگا چانک زلزلہ آ یا دیواریں ہلنے لگیں چھت لر زنے لگی قریب تھا کہ اس طبیب اس راہب کا مکان گر جا تا۔

اور راہب مکان کے نیچے آ جا تا وہ فوراً دروازہ کھول کر باہر نکل آ یا جب وہ با ہر آ یا تو اس نے حضرت عبدالمطلب کو پہچان لیا کہ یہ مکے کے سردار ہیں راہب نے کہا سر کار کیسے آ نا ہوا حضرت عبدالمطلب ؓ نے فر ما یا یہ میرا پو تا بیما ر تھا آنکھیں ٹھیک نہیں ہو رہی تھیں سنا ہے آپ دوا بھی دیتے ہیں دم بھی کر تے ہیں مہر بانی کرو کوئی دوائی دو اور دم بھی کرو تا کہ یہ ٹھیک ہو جا ئے راہب نے جب سرکارِ مدینہ ﷺ کے چہر انور کو دیکھا تو دیکھتا ہی رہ گیا۔ پھر ایک کمرے میں گیا اور غسل کیا نئے کپڑ پہنے خوشبو لگائی پھر ایک آسمانی صحیفہ کے چند اوراق اٹھا کر لا یا سر کار کے پاس آ کر دیکھنے لگا کبھی اپنی کتاب دیکھتا کبھی سرکار کا چہرہ دیکھتا کبھی کتاب دیکھتا کبھی ولیل کی زلفوں کو دیکھتا سارے اوراق بھی دیکھے کملی والے کو سر سے لے کر پاؤں تک بھےی دیکھا پھر قدموں میں گر کر کہنے لگا۔

اے محمد ﷺ میں گواہی دیتا ہوں کہ آپ اللہ تعالیٰ کے آخری رسول ہیں آپ کے بعد کوئی نبی نہیں آ ئے گا۔ سبحان اللہ عظمت مصطفیٰ ﷺ پر قربان ابھی اعلان نبوت فر ما یا نہیں لیکن راہب پہلے کلمہ پڑھ کر گواہی دے رہا ہے حضرت عبدالمطلب راہب کی بات سن کر بڑے خوش ہوئے پھر فر ما یا راہب صاحب جس کام کے لیے میں حاضر ہوا ہوں وہ جلدی کر یں۔ راہب نے کہا کون سا کام فر ما یا میرے پوتے کا دوا بھی دو اور دم بھی کر و چلنے لگے تو راہب نے کہا حضور شکریہ تو آپ کا کہ آپ نے سر کار کائنات کی مجھے زیارت کرائی ہے حضرت عبدالمطلب ؓ نے فر ما یا راہب صاحب آپ کا دم بڑا مشہور ہے سنا ہے۔

کہ آپ جس کو دم کر تے ہیں وہ مریض اس وقت ٹھیک ہو جا تا ہے وہ دم کیا کرتے ہیں وہ الفاظ کیا پڑھتے ہیں جن میں اللہ تعالیٰ نے اتنی تاثیر رکھ دی ہے راہب مسکرا پڑا مسکرا کر کہا حضور جب مر یض میرے پا س آتا ہے تو میں اللہ تعالیٰ کی بارگاہ میں ہاتھ اٹھا کر کہتا ہوں۔ یا اللہ تجھے آخر ی نبی کی عظمت کی قسم تجھے اس کے پیار کا واسطہ اس کی محبوبیت کا واسطہ اس بیمار کو شفا دے دے پھر میں مریض پر دم کر تا ہوں اللہ تعالیٰ بیمار کو شفا دے دیتا ہے۔

Categories

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *