ایک چلاک اور بدکار عورت سے ایک سادہ لوح آدمی کا نکاح ہو گیا ۔ وہ چھ ماہ پہلے

یک بدکار عورت سے کسی سادہ لوح انسان کا نکاح ہو گیا ۔ وہ عورت چھ ماہ پہلے ہی امید سے تھی ، چنانچہ نکاح کے تین ماہ بعد ہی بچہ پیدا ہو گیا ۔ وہ آدمی بہت خوش ہوا کہ اللہ نے مجھے بڑی اچھی بیوی دی ہے جس کے باعث اللہ تعالی نے مجھ پر بڑی جلدی کرم فرمایا اور مجھے فٹافٹ سے ابا بنادیا ۔

پھر جب وہ آدی بازار میں نکلا تو لوگ مذاق کرنے لگے ، وہ بہت گھبرایا کہ لوگ مبارکباد دینے کی بجاۓ مذاق کر رہے ہیں ۔ وہ لوگوں سے پوچھنے لگا کہ مذاق کی کیا وجہ ہے دلوگ کہنے لگے کہ بھلے آدمی بچہ تو خالص حرامی ہے ، تم تو جان بوجھ کر اس کے ابا بن رہے ہو ۔ جب اسنے پوچھا کہ بچہ حرامی کیسے ہے تو لوگوں نے بتایا کہ وہ شادی کے تین ماہ بعد ہی پیدا ہو گیا ہے اگر تمہارا ہوتا تو پورے نو ماہ کے بعد پیدا ہوتا ۔ وہ سادہ لوح آدمی لوگوں کی باتیں سن کر غصے سے گھر آ گیا اور اپنی بیوی سے کہنے لگا کہ تم نے یہ کیا غضب کیا ہے کہ چھ ماہ پہلے ہی بچہ پیدا کر دیا ۔

بچہ تو نو ماہ کے بعد ہی پیدا ہوتا ہے تم نے لوگوں میں میری ناک کٹوادی ہے ۔ عورت بولی تم بھی کتنے بھولے ہو ایسے ہی لوگوں کی باتوں میں آگئے ۔ میں نے پورے نو ماہ کے بعد ہی بچہ پیدا کیا ہے یقین نہ آئے تو حساب کر لیں بتائیں آپ کو مجھ سے نکاح کیے ہوۓ کتنے ماہ ہوۓ اس نے کہا کہتین ماہ اور مجھے آپ سے نکاح کیے ہوئے کتنے ماہ ہوئے وہ بولا کہ تین ماہ , پھر کہنے لگی کہ پہ کتنے ماہ کے بعد پیدا ہوا ۔ آدمی بولا تین ماہ کے بعد و پھر عورت کہنے لگی تو تین ماہ آپ کے تین میرے اور تین بچے کے پورے نو ماہ تو ہو گئے ہیں پھر اعتراض کیا ۔ سادہ لوح مطمئن ہو گیا اور کہنے لگا بالکل ٹھیک ہے ، لوگوں کا کیا ہے وہ تو جلتے ہی رہتے ہیں

Categories

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *