ایک عورت آنسو بہاتے ہوۓ حضرت عمر رضی اللہ عنہ کے پاس آئی عورت کے پیچھے ایک طویل القامت آدمی

یک عورت آنسو بہاتے ہوۓ امیر المومنین عمر بن الخطاب رضی اللہ عنہ کے پاس آئی اس کا حال یہ تھا کہ کپڑے میلے تھے ، نگے پاؤں تھی ، پیشانی اور رخساروں سے خون بہہ رہا تھا اور اس عورت کے پیچھے ایک طویل القامت آدمی کھڑا تھا ، اس آدمی نے زور دار آواز میں کہا : اے زانیہ ، حضرت عمر رضی اللہ عنہ نے فرمایا : مسئلہ کیا ہے ؟ اس

آدمی نے کہا کہ اے امیر المومنین ! اس عورت کو سنگسار کریں ، میں نے اس سے شادی کی تھی اور اس نے چھ مہینہ میں ہی بچہ جنم دیا ہے ۔ حضرت عمر رضی اللہ عنہ نے اس عورت کو سنگسار کرنے کا حکم دے دیا ۔ حضرت علی رضی اللہ عنہ نے جو حضرت عمر رضی اللہ عنہ کے برابر بیٹھے تھے ، کہا : اے امیر المومنین ! یہ عورت زنا سے

بری ہے ۔ حضرت عمر رضی اللہ عنہ نے فرمایا کہ وہ کیسے ؟ حضرت علی رضی اللہ عنہ نے فرمایا کہ اللہ تعالی کا ارشاد ہے ” وحملہ وفصال ، ثلاثون شهرۃ » ( احقاف : 15 ) اور دوسری جگہ فرمایا ہے ۔ ” فصال ، في عامین » ( لقمان : 14 ) تو جب ہم اس سے رضاعت کی مدت نکالیں گے جو کہ تیں مہینوں میں سے

پو میں مہینے ہیں تو چھ ماہ ہی باقی رہ جائیں گے ، لہذا ایک عورت چھ ماہ میں بچہ جن سکتا ہے ۔ یہ سن کر حضرت عمر رضی اللہ عنہ کا چہرہ دمک اٹھا اور فرمایا : ۔اگر ( آج ) علی رضی اللہ عنہ نہ ہوتے تو عمر رضی اللہ عنہ ہلاک ہو جاتا ۔۔۔۔۔۔

Categories

Comments are closed.